بھتہ – آج کا واقعہ – ٹیکنالوجی کا استعمال

بھتہ – آج کا واقعہ – ٹیکنالوجی کا استعمال

بھتہ – آج کا واقعہ – ٹیکنالوجی کا استعمال

یہ واقعہ آج کراچی میں پڑوس میں ہوا اس لئے بہتر سمجھا کہ یہاں بھی اس کا ذکر کردوں

پڑوس کی ایک پندرہ سولہ سالہہ بچی کے موبائل فون پر میسج آیا، اپنا موبائل نیٹ ورک ٹو جی سے تھری جی پر کنورٹ کرنے کے لئیے اس بٹن پر کلک کریں۔ یہ پراسس کم از کم تین گھنٹہ جاری رہے گا، اس دوران اپنا موبائل فون سوئچ آف رکھیں۔ بچی اپنی ایک سہیلی کے گھر افطار دعوت میں شرکت کے لئے گئی ہوئی تھی۔ بچی نے موبائل فون ہدایات کے مطابق سوئچ آف کر دیا

اس دوران میسج بیجھنے والوں نے اسی لڑکی کے والد سے موبائل فون پر رابطہ کیا اور کہا کہ آپ کی بیٹی ھم نے اغوا کر لی ہے، تین گھنٹے کے اندر پچاس لاکھ کا انتظام کریں

والد نے بیٹی کو فورا” فون کیا مگر بیٹی کا فون بند تھا۔ باپ نے پریشانی میں ہاتھ پاوں مارنا شروع کر دئیے۔ روزے دار آدمی ، سخت گرمی اور یہ مصیبت۔

والد تاجر ہیں، فورا” دوستوں سے رابطہ کیا، معاملہ بتایا اور روپوں کے انتظام میں لگ گئے۔ بار بار فون کیا مگر بیٹی کا فون بند جو تھا۔ اس لئیے سمجھے کہ واقعی بیٹی اغوا ہوگئی۔

اب بیٹی افظار کی دعوت میں تھی کہ ایک سہیلی نے اسے کہا کہ تم نے موبائل فون بند کیوں کیا اسے فلائٹ موڈ پر لگادو۔ اب جب بیٹی نے موبائل فون جوں ہی آن کیا تو والد کا فون مل گیا۔ کہاں ہو تم، والد نے پوچھا۔ ابو افطار کی دعوت میں۔ بتا کر تو آئی تھی۔ تم اغوا تو نہیں ہوئی؟؟ نہیں ابو میں بالکل ٹھیک ہوں اور دوست کے گھر پر ہوں۔ والد صاحب فورا گاڑی لے کر پہنچے اور بیٹی کو غصہ اور پریشانی کی حالت میں ایک دو تھپڑ بھی جھاڑ دئیے۔ والد اتنی دیر میں روپوں کا انتظام بھی کر چکے تھے اور بس روانہ ہی تھے کہ فون مل گیا۔

یہ رمضان کا مہینہ اور حلال کی کمائی تھی کہ اس طریقہ سے بچ گئی۔

دوستو

ایک خطرناک بات اب لکھ رہا ہوں۔

ایم کیو ایم کے لوگ ٹیلی کام سیکٹر میں موجود ہیں جو بھتہ اور ٹارگٹ کلرز کے ساتھ مل کر کام کر رہے ہیں

جب آپ سم لیتے ہیں تو اپنا شناختی کارڈ نمبر وغیرہ جمع کرواتے ہیں۔ اس ڈیٹا تک ایم کیو ایم کی مکمل رسائی ہے۔ کم از کم کراچی میں ایسا ہے۔ یہ لوگ اس ڈیٹا سے اپنے شکار کا سارا ریکارڈ نکال لیتے ہیں۔ اس موبائل فون نمبر کی ایگزیکٹ لوکیشن کا انہیں علم ہوتا ہے کہ یہ بندہ اس وقت کہاں ہے۔ حتہ کہ یہ اس قابل ہیں کہ آپ کے موبائل نمبر کو مکمل طور پر ہائی جیک کرلیں اور آپ کو علم ہی نہ ہو کہ آپ کا نمبر دوسرے کے استعمال میں ہے۔

رمضان کا مہینہ ہے۔ اللہ پاک سے دعا ہے کہ اس بابرکت مہینے میں ان ظالموں کی رسی کھینچ لے۔ ان کے ساتھ وہی سلوک کر جو فرعون اور اس کی کی قوم کے ساتھ ہوا۔

تمام حساس ادارے کمیونیکیشن کا مکمل نظام اپنے پاس رکھیں۔ کسی سیاسی پارٹی یا عام آدمی کی پہنچ عوام کی حساس ڈاٹا تک نہ ہو۔ میں یہاں یورپ میں بیٹھ کر یہ سب لکھ رہا ہوں۔ کیا حکومت کو کچھ احساس نہیں۔ کیا انہیں انگلی پکڑ کر بتانا پڑے گا کہ اس طریقے سے سسٹم بناو؟؟؟

پاکستان ریوولوشن