پاکستان کی آخری امید

پاکستان کی آخری امید

پاکستان کی آخری امید

 

 

 

بدقسمتی سے قآئد اعظم( رح)کے بعد پاکستان کو کوئی ایسا رھنما نصیب نہ ھوا ،جو اپنی ذات




کے دائرے سے باھر نکل کر پاکستان یاعام پاکستانی کے بارے سوچتا، جوبھی آیا ایک سے بڑھ
کر ایک، نآھل اقربا پرور،کرپٹ اور خودغرض، سیاستدانون کی نالآئقیوں اور نااتفاقیوں کی وجہ سے افواج پاکستان کو ملک عزیز میں کئی بارمارشل لا لگانا پڑا۔






در اصل سیاستدان خود ایک دوسرے کو نیچا دکھانے کے لئے افواج کو مارشل لا لگانے کیلیے پکارتے رھے۔ اور ان کرپٹ سیاستدانوں نے مارشل لا کوبھی کرپشن سکھادی۔




آجکل کچھ نام نھادسییاستدان مارشل لاکیلیے راستہ ھموار کرنے میں مصروف ھیں جیسے کہ آجکل لندن میں چوھدریبرادز قادری کے ساتھ میٹنگز میں لائحہ عمل بنا رھے ھیں۔


انتخابات کے زریعہ چوھد ری قادری مل کر حکومت میں نھیں آسکتے توان کو مارشل لا ھی راس آیگا
ان کا ایک اور ساتھی الطاف حسین کچھ ھی ھفتے پھلے ببانگ دھل فوج کواقتدار سنبھالنے کی
دعوت دے چکے ھیں اسکو بھی مارشل لا کی چھتری کے نیچے خون کی ھولی کھیلنے میں
آسانی ھوتی ھے جیساکہ 12مئی۔




شیخ رشید صاحب بھی اسی مشن پر گامزن ھیں۔اور شیخ رشید کی وجہ سے عمران خان کو بھی ان کا ساتھی سمجھا جارھاھے ۔ میرے خیال میں ایسا ھرگز نھیں- اگرچہ سب سے زیادہ زیادتی عمران خان کے ساتھ ھوی جس کا مینڈٹ چرایاگیا۔




ووٹ اسکے تھے عوام اس کے لیے باھر نکلی حکومت کسی اور کی جھولی میں ڈالدی گئی۔




مگر اسنے صبر کا دامن تھامے رکھااور پورا ایک سال اسنے انصاف کیلیے ھرایک قانونی در پردستک دی ۔جب کھیں بھی شنوای نہ ھوی تو اپنا حق احتجاج استعمال کر رھے ھیں ۔


اور اس احتجاج کی وجہ سے کچھ ھل چل شروع ھوی ھے۔ تو چوھدری برادرز قادری اور شیخ 
رشید جیسے لوگ اپنے مفاد کی خاطر اپنا لّچ تلنے میں مصروف ھوگئے ھیں ۔ 


جس کا نتیجہ ڈر ھے کہ مارشل لا کی صورت میں نکل سکتا جس کے لیے عمران خان کبھی سوچ بھی 
نھیں سکتا وہ اک جمھوری سوچ اور اپروچ رکھتا ھے۔




یہ نواز حکومت کی بدقسمتی ھے کہ وہ عمران خان جیسے بااصول اور وضعدار انسان کوسمجھ نہ سکی۔ اگر وہ عمران خان کا اصولی مطالبہ تسلیم کر کے 4 حلقے کھول دیتی توآج حکومت جانے کادھڑکا نہ ھوتا


اورھرغیراحکومت کےخلاف اتحاد کی نہ سوچ رھا ھوتا۔ شروع میں عمران خان بڑے نرم موڈ میں تھے اور اگر4 حلقوں میں دھاندھلی ثابت بھی ھوجاتی تو4 سیٹ سے ھاتھ دھونے پڑتے۔ 
اب خان اپنی ضد پرھے حکومت 4 حلقے نھین، خان جس جس حلقہ کی طرف اشارہ کرے کا حکومت ھر حلقہ کھولنے پر مجبورھوگی۔ اس کوکھتے ھیں 100پیاز کے ساتھ 100 چھتر بھی کھانا۔


عمران خان کو اپنا احتجاج اکیلے ھی جاری رکھناچاھیے اکثریت اس کو حق پر سمجھتی ھےاور اس کے ساتھ ھے عمران کو کسی لاحقے ساحقے اپنے ساتھ نتھی کرنے کی ضرورت نھیں اس کا جمھوریت کو پٹڑی سے اتارنے کا کوی ارادہ نھیں-




اس کا حق ھے کہ وہ دھاندھلی کے خلاف احتجاج کرے اور قوم اس کے ساتھ ھے۔ اسکے ایجنڈے کے ساتھ قوم متفق ھے اور اس اس کا ساتھ دے رھی ھے ۔طاھرالقادری، چوھدری برادرز،شیخ رشید وغیرہ کاایجنڈا مشکوک ھے اورقوم کو انکے ایجنڈا پرکافی سے زیادہ تحفظات ھیں۔ اس لیے ان سے ایک فاصلے پر رھنا ھی بھتر ھے۔




اگر خدا نخواستہ عمران خان انکو ساتھ ملانے یاانکا ساتھ دینے کی غلطی کر بیٹھا تو جمھوریت کو نقصان پہنچنے کی صورت میں سارا ملبہ عمران خان پر گرے گا۔ اور بھان متی گروہ اپنےاپنے مقاصد کےحصول کے بعد پرواز کرجائیینگے۔ 


اس میں کوی شک نہیں کہ عمران خان ایماندار، بھادر، نڈر،مخلص ،محنتی، ذھین، اعلی تعلیم یافتہ ایک ایسا رھنماھے جوقآئد اعظم کے بعدپاکستان کونصیب ھواھے۔ 


ھماری دعا کہ اللہ تعآلی اس کو قآئد کی ذھانت اورحکمت عملی عطا فرمائے۔آمین۔ اور عمران کی جھولی میں
جوکھوٹے سکے ھیں ان سے نجات پانے پانے میں اسکی مدد فرمائے۔ ثم آمین۔


عمران خان،پاکستانی قوم آپکو آخری امید سمجھ بیٹھی ھے ۔اس قوم نے بھت دھوکھے کھائےھین۔ جوبھی رھنما اس کوملا رھزن نکلا۔ پھربھی یہ نا امید نھین۔آپ اسکی شائد آخری امیدھین خدا را ان ازمائے ھوے چھودھری،قادری،جیسوں سے دور رھین اور قوم کی نظروں میں سرخرو رھیں۔ ۔ 


جس طرح سےآپکامینڈٹ چرایاگیا اسطرح اپنی بامقصد تحریک کسی کوھائی جیک کرنے کی اجازت نہ دیں


ملک وقوم قدم باقدم آپکےساتھ ھے عمران خان
قوم کی آرزو،پاکستان کی شان ھے عمران خان